ابھی میں یہ سوچ ہی رہا تھا

شہرام سرمدی

ابھی میں یہ سوچ ہی رہا تھا

شہرام سرمدی

MORE BYشہرام سرمدی

    نیاز مندوں کی بھیڑ ہے اک

    قطار اندر قطار سارے کھڑے ہوئے ہیں

    میں فاصلے پر ہوں سوچتا ہوں

    کہ دست خالی کے اس سفر میں

    کمانا کیا اور گنوانا کیا ہے

    میں اس مقام عجیب یعنی

    'کمانا کیا اور گنوانا کیا ہے'

    پہ جب پہنچتا ہوں دیکھتا کیا ہوں

    میں اسی دائرے کے اوپر کھڑا ہوا ہوں

    جہاں میں کل تھا

    جو فرق آیا تو صرف اتنا

    تب اس طرف تھا

    اب اس طرف ہوں

    ابھی میں یہ سوچ ہی رہا تھا

    'تو زندگی کیا سفر ہے بس اک طرف طرف کا'

    کہ آ گیا موڑ

    اشارہ تھا میرے بر طرف کا

    مآخذ :
    • کتاب : Na Mau'ud (Pg. 34)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY