ایک دوست کے نام

پروین شاکر

ایک دوست کے نام

پروین شاکر

MORE BY پروین شاکر

    لڑکی!

    یہ لمحے بادل ہیں

    گزر گئے تو ہاتھ کبھی نہیں آئیں گے

    ان کے لمس کو پیتی جا

    قطرہ قطرہ بھیگتی جا

    بھیگتی جا تو جب تک ان میں نم ہے

    اور ترے اندر کی مٹی پیاسی ہے

    مجھ سے پوچھ

    کہ بارش کو واپس آنے کا رستہ کبھی نہ یاد ہوا

    بال سکھانے کے موسم ان پڑھ ہوتے ہیں!

    مآخذ:

    • Book : kulliyaat-e-maahe tamaam(khushbo) (Pg. 215)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY