aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

جستجو

بسمل عارفی

جستجو

بسمل عارفی

MORE BYبسمل عارفی

    وہ ماہتاب اتر آئے چھت پہ کوئی شام

    ملے مجھے بھی محبت بھرا کوئی پیغام

    ہزار بار امنگوں نے مجھ کو بہکایا

    ہزار بار خیالوں نے مجھ کو اکسایا

    ہزار بار طبیعت تری طرف آئی

    ہزار بار اکیلے میں دل کو سمجھایا

    مگر یہ سچ ہے کہ ہر بار ہو گیا ناکام

    ملے مجھے بھی محبت بھرا کوئی پیغام

    ہزار بار مرے دل کا پھول مرجھایا

    ہزار بار لٹا میرے دل کا سرمایہ

    ہزار بار ترے آستاں پہ دستک دی

    ہزار بار نفی میں ترا جواب آیا

    اب اور کتنا کروں انتظار گل اندام

    ملے مجھے بھی محبت بھرا کوئی پیغام

    ہزار بار تری آرزو میں نکلا ہوں

    ہزار بار تجھے دیکھنے کو ٹھہرا ہوں

    ہزار بار تری راہ کی اڑائی دھول

    ہزار بار نیا نام لے کے لوٹا ہوں

    جنوں نے کیسا کیا دیکھ لے مجھے بدنام

    ملے مجھے بھی محبت بھرا کوئی پیغام

    ہزار بار ہواؤں میں کچھ لکھا میں نے

    ہزار بار کیا پیش مدعا میں نے

    ہزار بار ہوئی سعیٔ رائیگاں مجھ سے

    ہزار بار اشاروں سے کچھ کہا میں نے

    جو ابتدا ہو ضروری نہیں وہ ہو انجام

    ملے مجھے بھی محبت بھرا کوئی پیغام

    مأخذ :
    • کتاب : مرے تصور میں رنگ بھردو (Pg. 97)
    • Author : بسمل عارفی
    • مطبع : نور پبلی کیشن، دریا گنج،نئی دہلی (2019)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے