Font by Mehr Nastaliq Web

aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

گاندھی جینتی

عرش ملسیانی

گاندھی جینتی

عرش ملسیانی

MORE BYعرش ملسیانی

    بھول گئی ہے آج تو رہبر حق نگاہ کو

    بھول گئی ہے آج تو مرد جہاں پناہ کو

    بھول گئی ہے آج تو ضبط کے بادشاہ کو

    تجھ سے کہوں تو کیا کہوں اے مری بامراد قوم

    اے مری زندہ باد قوم اے مری زندہ باد قوم

    تیرے مہنت تو ابھی مست ہیں ذات پات میں

    تیرے بڑے بڑے گرو غرق ہیں چھوت چھات میں

    آہ کہ ڈھونڈھتی ہے تو نور اندھیری رات میں

    تجھ سے کہوں تو کیا کہوں اے مری بامراد قوم

    اے مری زندہ باد قوم اے مری زندہ باد قوم

    آہ کہ تو نے ضبط کے درس کو بھی بھلا دیا

    آہ کہ تو نے قلب سے نام صفا مٹا دیا

    آہ کہ دوستوں کو بھی تو نے عدو بنا دیا

    تجھ سے کہوں تو کیا کہوں اے مری بامراد قوم

    اے مری زندہ باد قوم اے مری زندہ باد قوم

    تیرے مشیر بے عمل تیرے وزیر بے عمل

    تیرے غریب بے عمل تیرے امیر بے عمل

    تیرے سفیر بے عمل تیرے کبیر بے عمل

    تجھ سے کہوں تو کیا کہوں اے مری بامراد قوم

    اے مری زندہ باد قوم اے مری زندہ باد قوم

    اف کہ قدم قدم پہ ہے تیرا شریک اہرمن

    اف کہ تجھے نصیب ہیں فرقہ پرست راہزن

    اف کہ تجھے عزیز ہیں چرب زبان و بد سخن

    تجھ سے کہوں تو کیا کہوں اے مری بامراد قوم

    اے مری زندہ باد قوم اے مری زندہ باد قوم

    اف کہ جہالتوں پہ بھی عقل کا ہے گماں تجھے

    اف کہ ابھی پسند ہے جہل کی داستاں تجھے

    اف کہ ہے فرقہ دوستی دیتی ابھی اماں تجھے

    تجھ سے کہوں تو کیا کہوں اے مری بامراد قوم

    اے مری زندہ باد قوم اے مری زندہ باد قوم

    ظلم کیے ہیں تو نے جو ظلم کے شاہدوں سے پوچھ

    قتل کیے ہیں کس قدر اپنے مجاہدوں سے پوچھ

    پیتے ہیں روز کتنی مے جھوٹ کے زاہدوں سے پوچھ

    تجھ سے کہوں تو کیا کہوں اے مری بامراد قوم

    اے مری زندہ باد قوم اے مری زندہ باد قوم

    درس مہاتما کا بھی تجھ پر کوئی اثر نہیں

    قول‌‌ مہاتما پہ بھی آج تری نظر نہیں

    کون ہے اس کا جانشیں اس کی تجھے خبر نہیں

    تجھ سے کہوں تو کیا کہوں اے مری بامراد قوم

    اے مری زندہ باد قوم اے مری زندہ باد قوم

    تجھ کو بتائے کون آج اصل میں راہبر ہے کون

    تجھ کو بتائے کون آج بندۂ معتبر ہے کون

    تجھ کو بتائے کون آج پیر جواں نظر ہے کون

    تجھ سے کہوں تو کیا کہوں اے مری بامراد قوم

    اے مری زندہ باد قوم اے مری زندہ باد قوم

    دیکھ نہ چشم شوق سے پتھروں کے تو طور تو

    قدر جواہر حسیں دیکھ بہ چشم غور تو

    ورنہ ہزار ذلتیں تیرے لیے ہیں اور تو

    تجھ سے کہوں تو کیا کہوں اے مری بامراد قوم

    اے مری زندہ باد قوم اے مری زندہ باد قوم

    مأخذ :
    • کتاب : Kulliyat-e-Arsh (Pg. 313)
    • Author : Arsh Malsiyani
    • مطبع : Ali Imran Chaudhary

    موضوعات

    یہ متن درج ذیل زمرے میں بھی شامل ہے

    ગુજરાતી ભાષા-સાહિત્યનો મંચ : રેખ્તા ગુજરાતી

    ગુજરાતી ભાષા-સાહિત્યનો મંચ : રેખ્તા ગુજરાતી

    મધ્યકાલથી લઈ સાંપ્રત સમય સુધીની ચૂંટેલી કવિતાનો ખજાનો હવે છે માત્ર એક ક્લિક પર. સાથે સાથે સાહિત્યિક વીડિયો અને શબ્દકોશની સગવડ પણ છે. સંતસાહિત્ય, ડાયસ્પોરા સાહિત્ય, પ્રતિબદ્ધ સાહિત્ય અને ગુજરાતના અનેક ઐતિહાસિક પુસ્તકાલયોના દુર્લભ પુસ્તકો પણ તમે રેખ્તા ગુજરાતી પર વાંચી શકશો

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے