Font by Mehr Nastaliq Web

aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

آخری خواہش

کشور ناہید

آخری خواہش

کشور ناہید

MORE BYکشور ناہید

    آج تو میرے کپڑے بھی پانی کی طرح بھاری ہیں

    موت کا کاجل آنکھوں میں لگانا

    اور آنکھوں میں پٹی باندھ کر تار پہ سائیکل چلانا

    ایک جیسا عمل ہے

    زندہ رہنے کا عمل

    مردہ زندگی کی دریوزگی سے

    انگور کی طرح رنگ بدل کر دو آتشہ ہونا

    پگھلی ہوئی موم بتی کی روشنی کے آخری وار

    کی طرح کاری ہوتا ہے

    بلی اپنے شکار سے

    پہلے کھیلتی ہے پھر کھاتی ہے

    آج جب کہ میرے کپڑے پانی کی طرح بھاری ہیں

    میری بنتی سنو

    مجھ سے کھیلنا بند کر دو

    مجھے کھا جاؤ

    مأخذ:

    kulliyat dusht-e-qais main laila (Pg. 523)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے