بہ گمان قطع زحمت نہ دو چار خامشی ہو

مرزا غالب

بہ گمان قطع زحمت نہ دو چار خامشی ہو

مرزا غالب

MORE BYمرزا غالب

    دلچسپ معلومات

    ۱۸۲۱ء

    بہ گمان قطع زحمت نہ دو چار خامشی ہو

    کہ زبان سرمہ آلود نہیں تیغ اصفہانی

    بہ فریب آشنائی بہ خیال بے وفائی

    نہ رکھ آپ سے تعلق مگر ایک بدگمانی

    نظرے سوے کہستاں نہیں غیر شیشہ ساماں

    جو گداز دل ہو مطلب تو چمن ہے سنگ جانی

    بہ فراز گاہ عبرت چہ بہارو کو تماشا

    کہ نگاہ ہے سیہ پوش بہ عزاے زندگانی

    بہ فراق رفتہ یاراں خط و حرف مو پریشاں

    دل غافل از حقیقت ہمہ ذوق قصہ خوانی

    تپش دل شکستہ پئے عبرت آگہی ہے

    کہ نہ دے عنان فرصت بہ کشاکش زبانی

    نہ وفا کو آبرو ہے نہ جفا تمیز جو ہے

    چہ حساب جانفشانی چہ غرور دلستانی

    بہ شکنج جستجوہا بہ سراب گفتگو ہا

    تگ و تاز آرزو ہا بہ فریب شادمانی

    نہیں شاہراہ اوہام بجز آں سوے سیدن

    تری سادگی ہے غافل در دل پہ پاسبانی

    چہ امید و نا امیدی چہ نگاہ و بے نگاہی

    ہمہ عرض نا شکیبی ہمہ ساز جاں ستانی

    اگر آرزو ہے راحت تو عبث بہ خوں تپیدن

    کہ خیال ہو تعب کش بہ ہواے کامرانی

    شر و شور آرزو سے تب و تاب عجز بہتر

    نہ کرے اگر ہوس پر غم بیدلی گرانی

    ہوس فروختن ہا تب و تاب سوختن ہا

    سر شمع نقش پا ہے بسپاس ناتوانی

    شرر اسیر دل کو ملے اوج عرض اظہار

    جو بہ صورت چراغاں کرے شعلہ نرد بانی

    ہوے مشق جرأت ناز رہ و رسم طرح آداب

    خم پشت خوشنما تھا بہ گزارش جوانی

    اگر آرزو رسا ہو پے درد دل دوا ہو

    وہ اجل کہ خوں بہا ہو بہ شہید ناتوانی

    غم عجز کا سفینہ بہ کنار بیدلی ہے

    مگر ایک شہپر مور کرے ساز بادبانی

    مجھے انتعاش غم نے پے عرض حال بخشی

    ہوس غزل سرائی تپش فسانہ خوانی

    **

    دل نا امید کیونکر بہ تسلی آشنا ہو

    جو امیدوار رہیے نہ بہ مرگ ناگہانی

    مجھے بادۂ طرب سے بہ خمار گاہ قسمت

    جو ملی تو تلخ کامی جو ہوئی تو سرگرانی

    نہ ستم کر اب تو مجھ پر کہ وہ دن گئے کہ ہاں تھی

    مجھے طاقت آزمانی تجھے الفت آزمانی

    بہ ہزار امیدواری رہی ایک اشک باری

    نہ ہوا حصول زاری بجز آستیں فشانی

    کروں عذر ترک صحبت سو کہاں وہ بے دماغی

    نہ غرور میر زائی نہ فریب ناتوانی

    ہمہ یک نفس تپش سے تب و تاب ہجر مت پوچھ

    کہ ستم کش جنوں ہوں نہ بقدر زندگانی

    کف موجۂ حیا ہوں بہ گزار عرض مطلب

    کہ سر شک قطرہ زن ہے بہ پیام دل رسانی

    یہی بار بار جی میں مرے آئے ہے کہ غالبؔ

    کروں خوان گفتگو پر دل و جاں کی میہمانی

    مأخذ :
    • کتاب : Deewan-e-Ghalib (Pg. 316)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے