ہند میں اہل تسنن کی ہیں دو سلطنتیں

مرزا غالب

ہند میں اہل تسنن کی ہیں دو سلطنتیں

مرزا غالب

MORE BYمرزا غالب

    INTERESTING FACT

    ۱۸۶۷ء

    ہند میں اہل تسنن کی ہیں دو سلطنتیں

    حیدرآباد دکن رشک گلستان ارم

    رامپور اہل نظر کی ہے نظر میں وہ شہر

    کہ جہاں ہشت بہشت آ کے ہوئے ہیں باہم

    حیدرآباد بہت دور ہے اس ملک کے لوگ

    اس طرف کو نہیں جاتے ہیں جو جاتے ہیں تو کم

    رام پور آج ہے وہ بقعہ معمور کہ ہے

    مرجع و مجمع اشراف نژاد آدم

    رام پور ایک بڑا باغ ہے از روے مثال

    دلکش و تازہ و شاداب و وسیع و خرم

    جس طرح باغ میں ساون کی گھٹائیں برسیں

    ہے اسی طور پہ یاں دجلہ فشاں دست کرم

    ابر دست کرم کلب علی خاں سے مدام

    در شہوار ہیں جو گرتے ہیں قطرے پیہم

    صبح دم باغ میں آ جائے جسے ہو نہ یقیں

    سبزہ و برگ گل و لالہ پہ دیکھے شبنم

    حبذا باغ ہمایون تقدس آثار

    کہ جہاں چرنے کو آتے ہیں غزالان حرم

    مسلک شرع کے ہیں راہرو و راہ شناس

    خضر بھی یاں اگر آجائے تو لے ان کے قدم

    مدح کے بعد دعا چاہیے اور اہل سخن

    اس کو کرتے ہیں بہت بڑھ کے بہ اغراق رقم

    حق سے کیا مانگیے ان کے لیے جب ہو موجود

    ملک و گنجینہ و خیل و سپہ و کوس و علم

    ہم نہ تبلیغ کے مائل نہ غلو کے قائل

    دو دعائیں ہیں کہ وہ دیتے ہیں نواب کو ہم

    یا خدا غالبؔ عاصی کے خدا وند کو دے

    دو وہ چیزیں کہ طلبگار ہے جن کا عالم

    اولاً عمر طبیعی بہ دوام اقبال

    ثانیاً دولت دیدار شہنشاہ امم

    مآخذ:

    • کتاب : Deewan-e-Ghalib (Pg. 494)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY