ADVERTISEMENT

اشعار پرماحولیات

جنگلوں کو کاٹ کر کیسا غضب ہم نے کیا

شہر جیسا ایک آدم خور پیدا کر لیا

فرحت احساس
ADVERTISEMENT

آگ جنگل میں لگی ہے دور دریاؤں کے پار

اور کوئی شہر میں پھرتا ہے گھبرایا ہوا

ظفر اقبال

جنگل جنگل آگ لگی ہے دریا دریا پانی ہے

نگری نگری تھاہ نہیں ہے لوگ بہت گھبرائے ہیں

جمیل عظیم آبادی