سوداے عشق سے دم سرد کشیدہ ہوں

مرزا غالب

سوداے عشق سے دم سرد کشیدہ ہوں

مرزا غالب

MORE BY مرزا غالب

    INTERESTING FACT

    ۱۸۱۶ء

    سوداے عشق سے دم سرد کشیدہ ہوں

    شام خیال زلف سے صبح دمیدہ ہوں

    دوران سر سے گردش ساغر ہے متصل

    خمخانۂ جنوں میں دماغ رسیدہ ہوں

    کی متصل ستارہ شماری میں عمر صرف

    تسبیح اشک ہاے زمژگاں چکیدہ ہوں

    ظاہر ہیں میری شکل سے افسوس کے نشاں

    خار الم سے پشت بدنداں گزیدہ ہوں

    ہوں گرمی نشاط تصور سے نغمہ سنج

    میں عندلیب گلشن نا آفریدہ ہوں

    دیتا ہوں کشتگاں کو سخن سے سر تپش

    مضراب تار ہاے گلوے بریدہ ہوں

    ہے جنبش زباں بدہن سخت ناگوار

    خونابۂ ہلاہل حسرت چشیدہ ہوں

    جوں بوے گل ہوں گرچہ گراں بار مشت زر

    لیکن اسدؔ بوقت گزشتن جریدہ ہوں

    مآخذ:

    • Book : Ghair Mutdavil Kalam-e-Ghalib (Pg. 84)
    • Author : Jamal Abdul Wahid
    • مطبع : Ghalib Academy Basti Hazrat Nizamuddin,New Delhi-13 (2016)
    • اشاعت : 2016
    • Book : Deewan-e-Ghalib (Pg. 210)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY