بہر پروردن سراسر لطف گستر سایہ ہے

مرزا غالب

بہر پروردن سراسر لطف گستر سایہ ہے

مرزا غالب

MORE BY مرزا غالب

    INTERESTING FACT

    ۱۸۱۶ء

    بہر پروردن سراسر لطف گستر سایہ ہے

    پنجۂ مژگاں بہ طفل اشک دست دایہ ہے

    فصل گل میں دیدۂ خونیں نگاہان جنوں

    دولت نظارہ گل سے شفق سرمایہ ہے

    شورش باطن سے یاں تک مجھ کو غفلت ہے کہ آہ

    شیون دل یک سرود خانۂ ہمسایہ ہے

    کیوں نہ تیغ یار کو مشاطہ الفت کہوں

    زخم مثل گل سراپا کا مرے پیرایہ ہے

    اے اسدؔ آباد ہے مجھ سے جہان شاعری

    خامہ میرا تخت سلطان سخن کا پایہ ہے

    مآخذ:

    • Book : Deewan-e-Ghalib (Pg. 279)
    • Book : Ghair Mutdavil Kalam-e-Ghalib (Pg. 137)
    • Author : Jamal Abdul Wahid
    • مطبع : Ghalib Academy Basti Hazrat Nizamuddin,New Delhi-13 (2016)
    • اشاعت : 2016

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY