Ajmal Ajmali's Photo'

اجمل اجملی

1932 - 1993 | الہٰ آباد, ہندوستان

معروف شاعر، مترجم اور مصنف

معروف شاعر، مترجم اور مصنف

اجمل اجملی کی اشعار

ماں نے لکھا ہے خط میں جہاں جاؤ خوش رہو

مجھ کو بھلے نہ یاد کرو گھر نہ بھولنا

جب بھی ملتا ہوں وہی چہرہ لیے

بد دعا دیتا ہے آئینہ مجھے

کتنی طویل کیوں نہ ہو باطل کی زندگی

ہر رات کا ہے صبح مقدر نہ بھولنا

آرزو تھی کھینچتے ہم بھی کوئی عکس حیات

کیا کریں اب کے لہو آنکھوں سے ٹپکا ہی نہیں

ہزار منزل غم سے گزر چکے لیکن

ابھی جنون محبت کی ابتدا بھی نہیں

تار نظر بھی غم کی تمازت سے خشک ہے

وہ پیاس ہے ملے تو سمندر سمیٹ لوں

اجملؔ نہ آپ سا بھی کوئی سخت جاں ملا

دیکھیں ہیں ہم نے یوں تو ستم آشنا بہت