آنکھوں کو پھوڑ ڈالوں یا دل کو توڑ ڈالوں

مصحفی غلام ہمدانی

آنکھوں کو پھوڑ ڈالوں یا دل کو توڑ ڈالوں

مصحفی غلام ہمدانی

MORE BYمصحفی غلام ہمدانی

    آنکھوں کو پھوڑ ڈالوں یا دل کو توڑ ڈالوں

    یا عشق کی پکڑ کر گردن مروڑ ڈالوں

    یک قطرہ خوں بغل میں ہے دل مری سو اس کو

    پلکوں سے تیری خاطر کیوں کر نچوڑ ڈالوں

    وہ آہوئے رمیدہ مل جائے تیرہ شب گر

    کتا بنوں شکاری اس کو بھنبھوڑ ڈالوں

    خیاط نے قضا کے جامہ سیا جو میرا

    آیا نہ جی میں اتنا کیا اس میں جوڑ ڈالوں

    وہ سنگ دل ہوا ہے اک سنگ دل پہ عاشق

    آتا ہے جی میں سر کو پتھروں سے پھوڑ ڈالوں

    بیٹھا ہوں خالی آخر اے آنسوؤ کروں کیا

    دو چار گوکھرو ہی لاؤ نہ موڑ ڈالوں

    تقصیر مصحفیؔ کی ہووے معاف صاحب

    فرماؤ تو تمہارے لا اس کو گوڑ ڈالوں

    مآخذ:

    • کتاب : kulliyat-e-mas.hafii(Vol-4)(pdf) (Pg. 224)
    • Author : Ghulam hamdani Mashafi
    • مطبع : Qaumi council baraye -farogh urdu (2005)
    • اشاعت : 2005

    Tagged Under

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY