اگر درد محبت سے نہ انساں آشنا ہوتا

چکبست برج نرائن

اگر درد محبت سے نہ انساں آشنا ہوتا

چکبست برج نرائن

MORE BYچکبست برج نرائن

    اگر درد محبت سے نہ انساں آشنا ہوتا

    نہ کچھ مرنے کا غم ہوتا نہ جینے کا مزا ہوتا

    بہار گل میں دیوانوں کا صحرا میں پرا ہوتا

    جدھر اٹھتی نظر کوسوں تلک جنگل ہرا ہوتا

    مئے گل رنگ لٹتی یوں در مے خانہ وا ہوتا

    نہ پینے کی کمی ہوتی نہ ساقی سے گلا ہوتا

    ہزاروں جان دیتے ہیں بتوں کی بے وفائی پر

    اگر ان میں سے کوئی با وفا ہوتا تو کیا ہوتا

    رلایا اہل محفل کو نگاہ یاس نے میری

    قیامت تھی جو اک قطرہ ان آنکھوں سے جدا ہوتا

    خدا کو بھول کر انسان کے دل کا یہ عالم ہے

    یہ آئینہ اگر صورت نما ہوتا تو کیا ہوتا

    اگر دم بھر بھی مٹ جاتی خلش خار تمنا کی

    دل حسرت طلب کو اپنی ہستی سے گلا ہوتا

    مآخذ :
    • کتاب : Karwaan-e-Ghazal (Pg. 51)
    • Author : Farooq Argali
    • مطبع : Farid Book Depot (Pvt.) Ltd (2004)
    • اشاعت : 2004

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY