اخیر شب سرد راکھ چولھے کی جھاڑ لائیں

صابر

اخیر شب سرد راکھ چولھے کی جھاڑ لائیں

صابر

MORE BYصابر

    اخیر شب سرد راکھ چولھے کی جھاڑ لائیں

    تمہاری یادوں کے آئنے پھر سے جگمگائیں

    گلی کے نکڑ پر اب نہیں ہے وہ شور پھیلا

    بھلائی اس میں ہے ذائقے ہم بھی بھول جائیں

    رکھے رکھے ہو گئے پرانے تمام رشتے

    کہاں کسی اجنبی سے رشتہ نیا بنائیں

    وہ ہنسی آنکھیں جلائے دیتی ہیں جاں ہماری

    نواح جاں میں غبار آہ و بکا اڑائیں

    ہماری سب لغزشیں ہیں محفوظ ڈائری میں

    تبھی تو ہیں مدعی کہ کم کم ملی سزائیں

    مأخذ :
    • کتاب : Zehne Jadid (Pg. 153)
    • Author : Jamshed Jahan
    • مطبع : C-2 AB Complex, 179, Zakir Nagar, New Delhi-25 (issue:64 Sep To Jan 2013)
    • اشاعت : issue:64 Sep To Jan 2013

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY