اپنا سا شوق اوروں میں لائیں کہاں سے ہم

حسرتؔ موہانی

اپنا سا شوق اوروں میں لائیں کہاں سے ہم

حسرتؔ موہانی

MORE BYحسرتؔ موہانی

    اپنا سا شوق اوروں میں لائیں کہاں سے ہم

    گھبرا گئے ہیں بے دلئ ہم رہاں سے ہم

    کچھ ایسی دور بھی تو نہیں منزل مراد

    لیکن یہ جب کہ چھوٹ چلیں کارواں سے ہم

    اے یاد یار دیکھ کہ باوصف رنج ہجر

    مسرور ہیں تری خلش ناتواں سے ہم

    معلوم سب ہے پوچھتے ہو پھر بھی مدعا

    اب تم سے دل کی بات کہیں کیا زباں سے ہم

    اے زہد خشک تیری ہدایت کے واسطے

    سوغات عشق لائے ہیں کوئے بتاں سے ہم

    بیتابیوں سے چھپ نہ سکا حال آرزو

    آخر بچے نہ اس نگہ بدگماں سے ہم

    پیرانہ سر بھی شوق کی ہمت بلند ہے

    خواہان کام جاں ہیں جو اس نوجواں سے ہم

    مایوس بھی تو کرتے نہیں تم ز راہ ناز

    تنگ آ گئے ہیں کشمکش امتحاں سے ہم

    خلوت بنے گی تیرے غم جاں نواز کی

    لیں گے یہ کام اپنے دل شادماں سے ہم

    ہے انتہائے یاس بھی اک ابتدائے شوق

    پھر آ گئے وہیں پہ چلے تھے جہاں سے ہم

    حسرتؔ پھر اور جا کے کریں کس کی بندگی

    اچھا جو سر اٹھائیں بھی اس آستاں سے ہم

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    اپنا سا شوق اوروں میں لائیں کہاں سے ہم نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY