اپنی دنیا خود بہ فیض غم بنا سکتا ہوں میں

نشور واحدی

اپنی دنیا خود بہ فیض غم بنا سکتا ہوں میں

نشور واحدی

MORE BYنشور واحدی

    اپنی دنیا خود بہ فیض غم بنا سکتا ہوں میں

    اک جہان شوق نا محکم بنا سکتا ہوں میں

    میری آنکھوں میں ہیں آنسو تیرے دامن میں بہار

    گل بنا سکتا ہے تو شبنم بنا سکتا ہوں میں

    دل کے باجے میں نہیں معلوم کتنے تار ہیں

    حسن کو اک تار کا محرم بنا سکتا ہوں میں

    پھر حقیقت کی اسی جنت کی جانب لوٹ کر

    بندگی کو لغزش آدم بنا سکتا ہوں میں

    حاصل اشک ندامت کچھ نہیں اس کے سوا

    ہے جو دامن تر اسی کو نم بنا سکتا ہوں میں

    عشق ہوں میرے لیے پاس حدود ہوش کیا

    ہو کے دیوانہ بھی اک عالم بنا سکتا ہوں میں

    جس قدر آنسو گرے اتنا ہی انساں ہو سکا

    زندگی شاید بقدر غم بنا سکتا ہوں میں

    خود شناسی کی شراب آتشیں بھر کر نشورؔ

    کاسۂ مفلس کو جام جم بنا سکتا ہوں میں

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    نشور واحدی

    نشور واحدی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY