بنام عشق اک احسان سا ابھی تک ہے

شہرام سرمدی

بنام عشق اک احسان سا ابھی تک ہے

شہرام سرمدی

MORE BYشہرام سرمدی

    بنام عشق اک احسان سا ابھی تک ہے

    وہ سادہ لوح ہمیں چاہتا ابھی تک ہے

    فقط زمان و مکاں میں ذرا سا فرق آیا

    جو ایک مسئلۂ درد تھا ابھی تک ہے

    شروع عشق میں حاصل ہوا جو دیر کے بعد

    وہ ایک صفر تہ حاشیہ ابھی تک ہے

    حلول کر چکی خود میں ہزار نقش و رنگ

    یہ کائنات جو خاکہ نما ابھی تک ہے

    طویل سلسلۂ مصلحت ہے چار طرف

    یقین کر لے مری جاں خدا ابھی تک ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY