بس ایک پردۂ اغماض تھا کفن اس کا

زیب غوری

بس ایک پردۂ اغماض تھا کفن اس کا

زیب غوری

MORE BYزیب غوری

    بس ایک پردۂ اغماض تھا کفن اس کا

    لہولہان پڑا تھا برہنہ تن اس کا

    نہ یہ زمین ہوئی اس کے خون سے گل نار

    نہ آسماں سے اتارا گیا کفن اس کا

    رم نجات بس اک جنبش ہوا میں تھا

    کہ نقش آب کو ٹھہرا دیا بدن اس کا

    لہکتے شعلوں میں گو راکھ ہو چکے اوراق

    ہوا چلی تو دمکنے لگا سخن اس کا

    گھسیٹتے ہوئے خود کو پھرو گے زیبؔ کہاں

    چلو کہ خاک کو دے آئیں یہ بدن اس کا

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    بس ایک پردۂ اغماض تھا کفن اس کا نعمان شوق

    مآخذ
    • کتاب : Zard Zarkhez (Pg. 58)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY