بس کہ اک لمس کی امید پہ وارے ہوئے ہیں

ارشد جمال صارم

بس کہ اک لمس کی امید پہ وارے ہوئے ہیں

ارشد جمال صارم

MORE BY ارشد جمال صارم

    بس کہ اک لمس کی امید پہ وارے ہوئے ہیں

    سو ترے سامنے یہ خاک پسارے ہوئے ہیں

    جانے کب ان کو بجھا بیٹھے کوئی باد الم

    سر مژگان تمنا جو ستارے ہوئے ہیں

    زندگی تو بھی ہمیں ویسے ہی اک روز گزار

    جس طرح ہم تجھے برسوں سے گزارے ہوئے ہیں

    نت نئے نقش کریں اس پہ اذیت کے رقم

    آ کہ ہم تختیٔ دل اپنی پچارے ہوئے ہیں

    کب کچل جائیں کسی پاؤں سے ہم برگ وجود

    وقت کی دھوپ میں ویسے ہی کرارے ہوئے ہیں

    جانتے ہیں کہ تو ہی عشق بدن کو ہے لباس

    ہم ترا روپ جو آشفتگی دھارے ہوئے ہیں

    اپنی جرأت کی ستائش ہو کہ ہم چوب مزاج

    ربط رکھتے ہیں سدا ان سے جو آرے ہوئے ہیں

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    ارشد جمال صارم

    ارشد جمال صارم

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY