Font by Mehr Nastaliq Web

aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

بشیرؔ بدرؔ کی غزلیں سنا رہا تھا میں

محسن آفتاب کیلاپوری

بشیرؔ بدرؔ کی غزلیں سنا رہا تھا میں

محسن آفتاب کیلاپوری

MORE BYمحسن آفتاب کیلاپوری

    بشیرؔ بدرؔ کی غزلیں سنا رہا تھا میں

    کل آسماں کو زمیں پر بلا رہا تھا میں

    گزر رہا تھا میں جب میکدے کی راہوں سے

    جگر کے ہاتھ سے دامن بچا رہا تھا میں

    یہ بات سب کو بتائی تھی مرزا غالب نے

    بہار گھر میں تھی صحرا اڑا رہا تھا میں

    تمہاری یاد بھی چپکے سے آ کے بیٹھ گئی

    غزل جو میرؔ کی اک گنگنا رہا تھا میں

    اداس شام نظر آئی جان کے جیسی

    جب انتظار میں تیرے کھڑا رہا تھا میں

    وہ امرتا کی طرح مجھ سے عشق کرتی تھی

    سو اپنے آپ کو ساحرؔ بتا رہا تھا میں

    فرازؔ و فیضؔ کے دل کش کلام کو پڑھ کر

    محبتوں کا طریقہ سکھا رہا تھا میں

    مجازؔ کان میں میرے بتا گئے آ کر

    کہ کیسے حسن کو پاگل بنا رہا تھا میں

    شکیلؔ اعظمی کہنے لگے پروں کو کھول

    جو سوئے آسماں سر کو اٹھا رہا تھا میں

    یہ باتوں باتوں میں مجھ کو بتا گئے تنویرؔ

    کل اس کے ہاتھ کا کنگن گھما رہا تھا میں

    نداؔ نے شہر میں گاؤں بسا کے رکھا تھا

    سو ان سے ملنے اسی گاؤں جا رہا تھا میں

    لپٹ کے رونے لگے مجھ سے شاعر مشرق

    جب ان کو قوم کی حالت بتا رہا تھا میں

    ظفرؔ بتائیں گے تم کو یا میں بتاؤں گا

    کے ملک چھوڑ کے کس طرح جا رہا تھا میں

    عجب ہی خواب دکھائی دیا مجھے محسنؔ

    کل آفتاب کی میت اٹھا رہا تھا میں

    ગુજરાતી ભાષા-સાહિત્યનો મંચ : રેખ્તા ગુજરાતી

    ગુજરાતી ભાષા-સાહિત્યનો મંચ : રેખ્તા ગુજરાતી

    મધ્યકાલથી લઈ સાંપ્રત સમય સુધીની ચૂંટેલી કવિતાનો ખજાનો હવે છે માત્ર એક ક્લિક પર. સાથે સાથે સાહિત્યિક વીડિયો અને શબ્દકોશની સગવડ પણ છે. સંતસાહિત્ય, ડાયસ્પોરા સાહિત્ય, પ્રતિબદ્ધ સાહિત્ય અને ગુજરાતના અનેક ઐતિહાસિક પુસ્તકાલયોના દુર્લભ પુસ્તકો પણ તમે રેખ્તા ગુજરાતી પર વાંચી શકશો

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے