دریائے اشک چشم سے جس آن بہہ گیا

شیخ ابراہیم ذوقؔ

دریائے اشک چشم سے جس آن بہہ گیا

شیخ ابراہیم ذوقؔ

MORE BYشیخ ابراہیم ذوقؔ

    دریائے اشک چشم سے جس آن بہہ گیا

    سن لیجیو کہ عرش کا ایوان بہہ گیا

    بل بے گداز عشق کہ خوں ہو کے دل کے ساتھ

    سینے سے تیرے تیر کا پیکان بہہ گیا

    زاہد شراب پینے سے کافر ہوا میں کیوں

    کیا ڈیڑھ چلو پانی میں ایمان بہہ گیا

    ہے موج بحر عشق وہ طوفاں کہ الحفیظ

    بیچارہ مشت خاک تھا انسان بہہ گیا

    دریائے اشک سے دم تحریر حال دل

    کشتی کی طرح میرا قلم دان بہہ گیا

    یہ روئے پھوٹ پھوٹ کے پانی کے آبلے

    نالہ سا ایک سوئے بیابان بہہ گیا

    تھا تو بہا میں بیش پر اس لب کے سامنے

    سب مول تیرا لعل بدخشان بہہ گیا

    کشتی سوار عمر ہوں بحر فنا میں ذوقؔ

    جس دم بہا کے لے گیا طوفان بہہ گیا

    تھا ذوقؔ پہلے دہلی میں پنجاب کا سا حسن

    پر اب وہ پانی کہتے ہیں ملتان بہہ گیا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY