دریا میں طغیانی ہے

تنویر گوہر

دریا میں طغیانی ہے

تنویر گوہر

MORE BYتنویر گوہر

    دریا میں طغیانی ہے

    بستی بستی پانی ہے

    آہ کہ جنگل ہیں آباد

    شہروں میں ویرانی ہے

    مشکل سے اب کیا ڈرنا

    اس میں ہی آسانی ہے

    دنیا کی کیا چاہ کریں

    دنیا آنی جانی ہے

    اس کو تو پچھتانا ہے

    جس نے دل کی مانی ہے

    میں بھی من کا راجا ہوں

    وہ بھی دل کی رانی ہے

    اے دل اس کو بھول بھی جا

    یہ کیسی من مانی ہے

    موت سے گوہرؔ ڈرنا کیا

    موت تو اک دن آنی ہے

    مأخذ :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY