دل خوش نہ ہوا زلف پریشاں سے نکل کر

مصحفی غلام ہمدانی

دل خوش نہ ہوا زلف پریشاں سے نکل کر

مصحفی غلام ہمدانی

MORE BYمصحفی غلام ہمدانی

    دل خوش نہ ہوا زلف پریشاں سے نکل کر

    پچھتائے ہم اس شام غریباں سے نکل کر

    یہ اس سے زیاں کار تو وہ اس سے بد آئیں

    جاؤں میں کہاں گبر و مسلماں سے نکل کر

    استاد کوئی زور ملا قیس کو شاید

    لی راہ جو جنگل کی دبستاں سے نکل کر

    معلوم نہیں مجھ کو کہ جاوے گا کدھر کو

    یوں سینہ ترا چاک گریباں سے نکل کر

    گزرا رگ گردن سے کہ جوں شمع سر اپنا

    تلوار ہی کھاتا ہے گریباں سے نکل کر

    نا زوری میں آیا نہ کبھو تا سر مژگاں

    یک قطرۂ خوں بھی بن مژگاں سے نکل کر

    تیروں میں کماں دار مرا گھیر لے جس کو

    وہ جانے نہ پاوے کبھی میداں سے نکل کر

    ہم آپ فنا ہو گئے اے ہستئ موہوم

    جوں موج تبسم لب جاناں سے نکل کر

    صورت کے تری سامنے رہ جائے ہے کیسے

    ہر بت کی نگہ دیدۂ حیراں سے نکل کر

    اس دست حنائی میں رہا آئینہ اکثر

    دریا نہ گیا پنجۂ مرجاں سے نکل کر

    اب پڑھ وہ غزل مصحفیؔ تو شستہ و رفتہ

    سننے جسے خلق آئے صفاہاں سے نکل کر

    مآخذ:

    • کتاب : kulliyat-e-mas.hafii(shashum) (Pg. 141)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY