دنیا سبب شورش غم پوچھ رہی ہے

اعجاز صدیقی

دنیا سبب شورش غم پوچھ رہی ہے

اعجاز صدیقی

MORE BYاعجاز صدیقی

    دنیا سبب شورش غم پوچھ رہی ہے

    اک مہر خموشی ہے کہ ہونٹوں پہ لگی ہے

    کچھ اور زیادہ اثر تشنہ لبی ہے

    جب سے تری آنکھوں سے چھلکتی ہوئی پی ہے

    اس جبر کا اے اہل جہاں نام کوئی ہے

    کلفت میں بھی آرام ہے غم میں بھی خوشی ہے

    ارباب چمن اپنی بہاروں سے یہ پوچھیں

    دامان گل و غنچہ میں کیوں آگ لگی ہے

    اے ہم سفرو ڈھونڈھ لو آسانی منزل

    اپنا تو یہ دل خوگر مشکل طلبی ہے

    اے موجۂ طوفاں ترا دل کوئی بھی توڑے

    ساحل نے سفینے کو اک آواز تو دی ہے

    مأخذ :
    • کتاب : Karwaan-e-Ghazal (Pg. 133)
    • Author : Farooq Argali
    • مطبع : Farid Book Depot (Pvt.) Ltd (2004)
    • اشاعت : 2004

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY