ایک سودا ہے لذت غم ہے

انجم اعظمی

ایک سودا ہے لذت غم ہے

انجم اعظمی

MORE BYانجم اعظمی

    ایک سودا ہے لذت غم ہے

    آج پھر میری آنکھ پر نم ہے

    دل کو بہلا رہے ہیں مدت سے

    زندگی کیا عذاب سے کم ہے

    ذرہ ذرہ اداس ہے اس کا

    میرے گھر کا عجیب عالم ہے

    مہر و مہ پر کمند پڑتی ہے

    سوچ میں کوئی ابن آدم ہے

    تجھ سے پردہ نہیں مرے غم کا

    تو مری زندگی کا محرم ہے

    یہ جو اک اعتبار ہے تم پر

    کس قدر پائیدار و محکم ہے

    کل تو دنیا بدل ہی جائے گی

    آج ان کا یہ جور پیہم ہے

    دل نہ کعبہ ہے نے کلیسا ہے

    تیرا گھر ہے حریم مریم ہے

    مآخذ

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY