فنا کا ہوش آنا زندگی کا درد سر جانا

چکبست برج نرائن

فنا کا ہوش آنا زندگی کا درد سر جانا

چکبست برج نرائن

MORE BYچکبست برج نرائن

    فنا کا ہوش آنا زندگی کا درد سر جانا

    اجل کیا ہے خمار بادۂ ہستی اتر جانا

    عزیزان وطن کو غنچہ و برگ و ثمر جانا

    خدا کو باغباں اور قوم کو ہم نے شجر جانا

    عروس جاں نیا پیراہن ہستی بدلتی ہے

    فقط تمہید آنے کی ہے دنیا سے گزر جانا

    مصیبت میں بشر کے جوہر مردانہ کھلتے ہیں

    مبارک بزدلوں کو گردش قسمت سے ڈر جانا

    وہ طبع یاس پرور نے مجھے چشم عقیدت دی

    کہ شام غم کی تاریکی کو بھی نور سحر جانا

    بہت سودا رہا واعظ تجھے نار جہنم کا

    مزہ سوز محبت کا بھی کچھ اے بے خبر جانا

    کرشمہ یہ بھی ہے اے بے خبر افلاس قومی کا

    تلاش رزق میں اہل ہنر کا در بدر جانا

    اجل کی نیند میں بھی خواب ہستی گر نظر آیا

    تو پھر بے کار ہے تنگ آ کے اس دنیا سے مر جانا

    وہ سودا زندگی کا ہے کہ غم انسان سہتا ہے

    نہیں تو ہے بہت آسان اس جینے سے مر جانا

    چمن زار محبت میں اسی نے باغبانی کی

    کہ جس نے اپنی محنت کو ہی محنت کا ثمر جانا

    سدھاری منزل ہستی سے کچھ بے اعتنائی سے

    تن خاکی کو شاید روح نے گرد سفر جانا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY