فکر کا گر سلسلہ موجود ہے

ابرار عابد

فکر کا گر سلسلہ موجود ہے

ابرار عابد

MORE BYابرار عابد

    فکر کا گر سلسلہ موجود ہے

    فاش ہے وہ بھی جو ناموجود ہے

    اس سے مجھ سے فاصلہ کچھ بھی نہیں

    ایک دیوار انا موجود ہے

    سوچتا ہوں کچھ عمل کرتا ہوں کچھ

    مجھ میں کوئی دوسرا موجود ہے

    سنتا رہتا ہوں ترے قدموں کی چاپ

    ورنہ دل میں اور کیا موجود ہے

    ہجر میں روئے تو جی ہلکا ہوا

    درد کے اندر دوا موجود ہے

    حال پوچھا اس نے مجھ سے بات کی

    اب یقین آیا خدا موجود ہے

    اب تو عابدؔ چشم نم بھی ہے خموش

    روز اک صدمہ نیا موجود ہے

    مأخذ :
    • کتاب : Pakistani Adab (Pg. 286)
    • Author : Dr. Rashid Amjad
    • مطبع : Pakistan Academy of Letters, Islambad, Pakistan (2009)
    • اشاعت : 2009

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY