گھر کو یوں توڑو کہ پھر حسرت تعمیر نہ ہو

خلیل مامون

گھر کو یوں توڑو کہ پھر حسرت تعمیر نہ ہو

خلیل مامون

MORE BY خلیل مامون

    گھر کو یوں توڑو کہ پھر حسرت تعمیر نہ ہو

    کوئی تقدیر نہ ہو اور کوئی تدبیر نہ ہو

    ایسے مر جائیں کوئی نقش نہ چھوڑیں اپنا

    یاد دل میں نہ ہو اخبار میں تصویر نہ ہو

    بیٹھے بیٹھے یونہی اندھیارے میں زائل ہو جائیں

    کوئی دم ساز نہ ہو کوئی خبر گیر نہ ہو

    نیند میں تتلیاں آنکھوں میں لہکتی جائیں

    خواب دیکھیں مگر اس خواب کی تعبیر نہ ہو

    کون سنتا ہے مرے شعر یہاں اب مامونؔ

    عین ممکن ہے مری بات میں تاثیر نہ ہو

    مآخذ:

    • کتاب : Sanson Ke Paar (Pg. 173)
    • Author : Khalil Mamoon
    • مطبع : Educational Publishing House, Delhi (2015)
    • اشاعت : 2015

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY