غبار جاں سے ستارا نکلنا چاہتا ہے

جینت پرمار

غبار جاں سے ستارا نکلنا چاہتا ہے

جینت پرمار

MORE BYجینت پرمار

    غبار جاں سے ستارا نکلنا چاہتا ہے

    یہ آسمان بھی کروٹ بدلنا چاہتا ہے

    مرے لہو کا سمندر اچھلنا چاہتا ہے

    یہ چاند میرے بدن میں پگھلنا چاہتا ہے

    سیاہ دشت میں امکان روشنی بھی نہیں

    مگر یہ ہاتھ اندھیرے میں جلنا چاہتا ہے

    ہر ایک شاخ کے ہاتھوں میں پھول مہکیں گے

    خزاں کا پیڑ بھی کپڑے بدلنا چاہتا ہے

    بہت کٹھن ہے کہ سانسیں بھی بار لگتی ہیں

    مرا وجود بھی نقطے میں ڈھلنا چاہتا ہے

    RECITATIONS

    جینت پرمار

    جینت پرمار,

    جینت پرمار

    غبار جاں سے ستارا نکلنا چاہتا ہے جینت پرمار

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے