گمان زخم تمنا تھا اب تلک مجھ کو

خلیل مامون

گمان زخم تمنا تھا اب تلک مجھ کو

خلیل مامون

MORE BYخلیل مامون

    گمان زخم تمنا تھا اب تلک مجھ کو

    نہیں ہے داغ بھی دل میں نہ تھی بھنک مجھ کو

    چلا گیا تو کبھی لوٹ کر نہیں آیا

    پکارتا رہا آئینۂ فلک مجھ کو

    اب اس کو ڈھونڈھتا پھرتا ہوں شہر و دریا میں

    چلا گیا وہ دکھا کر بس اک جھلک مجھ کو

    نڈھال ہوں میں غم دل سے ہوش کب ہے مجھے

    بنائے رکھتی ہے اک ہوک اک کسک مجھ کو

    مجھے تو عشق ہے پھولوں میں صرف خوشبو سے

    بلا رہی ہے کسی لالہ کی مہک مجھ کو

    نقاب اٹھا تو اک شعلہ سا بھڑک اٹھا

    جلا گئی ہے ترے چہرے کی جھمک مجھ کو

    ترس رہا تھا اجالوں کو کب سے میں مامونؔ

    پر اندھا کر گئی سورج کی اک چمک مجھ کو

    مآخذ:

    • کتاب : Sanson Ke Paar (Pg. 223)
    • Author : Khalil Mamoon
    • مطبع : Educational Publishing House, Delhi (2015)
    • اشاعت : 2015

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY