غنچہ غنچہ ہنس رہا تھا، پتی پتی رو گیا

علی اکبر ناطق

غنچہ غنچہ ہنس رہا تھا، پتی پتی رو گیا

علی اکبر ناطق

MORE BYعلی اکبر ناطق

    غنچہ غنچہ ہنس رہا تھا، پتی پتی رو گیا

    پھول والوں کی گلی میں گل تماشا ہو گیا

    ہم نے دیکھیں دھوپ کی سڑکوں پہ جس کی وحشتیں

    رات کے سینے سے لگ کر آخرش وہ سو گیا

    آسماں کے روزنوں سے لوٹ آتا تھا کبھی

    وہ کبوتر اک حویلی کے چھجوں میں کھو گیا

    اک گلی کے نور نے تاریک کتنے گھر کیے

    وہ نہ لوٹا شخص بینا آنکھیں لے کر جو گیا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے