حوصلے اپنے رہنما تو ہوئے

جمیل نظر

حوصلے اپنے رہنما تو ہوئے

جمیل نظر

MORE BY جمیل نظر

    حوصلے اپنے رہنما تو ہوئے

    حادثے غم کا آسرا تو ہوئے

    بے وفا ہی سہی زمانے میں

    ہم کسی فن کی انتہا تو ہوئے

    وادئ غم کے ہم کھنڈر ہی سہی

    آنے والوں کا راستہ تو ہوئے

    کچھ تو موجیں اٹھی سمندر سے

    بے سبب ہی سہی خفا تو ہوئے

    ان کو اپنا ہی غم سہی لیکن

    وہ کسی غم میں مبتلا تو ہوئے

    خود کو بیگانہ کر کے دنیا سے

    چند چہروں سے آشنا تو ہوئے

    خندۂ گل ہوئے کہ شعلۂ جاں

    حال پہ میرے لب کشا تو ہوئے

    پتھروں کے نگر میں جا کے نظرؔ

    کم سے کم سنگ آشنا تو ہوئے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites