حساب عمر کرو یا حساب جام کرو

سلیمان اریب

حساب عمر کرو یا حساب جام کرو

سلیمان اریب

MORE BY سلیمان اریب

    حساب عمر کرو یا حساب جام کرو

    بقدر ظرف شب غم کا اہتمام کرو

    اگر ذرا بھی روایت کی پاسداری ہے

    خرد کے دور میں رسم جنوں کو عام کرو

    خدا گواہ فقیروں کا تجربہ یہ ہے

    جہاں ہو صبح تمہاری وہاں نہ شام کرو

    نہ رند و شیخ نہ ملا نہ محتسب نہ فقیہ

    یہ مے کدہ ہے یہاں سب کو شاد کام کرو

    وہی ہے تیشہ بیاباں وہی ہے دار وحی

    جو ہو سکے تو زمانے میں تم بھی نام کرو

    خرام یار کی آہٹ سی دل سے آتی ہے

    سرشک خوں سے چراغاں کا اہتمام کرو

    اسیر زلف ہمیں اک نہیں ہیں میرؔ بھی تھے

    مگر اب اٹھ کے دو عالم کو زیر دام کرو

    اریبؔ دیکھو نہ اتراؤ چند شعروں پر

    غزل وہ فن ہے کہ غالبؔ کو تم سلام کرو

    مآخذ:

    • Book: Karwaan-e-Ghazal (Pg. 200)
    • Author: Farooq Argali
    • مطبع: Farid Book Depot (Pvt.) Ltd (2004)
    • اشاعت: 2004

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites