ادھر کی آئے گی اک رو ادھر کی آئے گی

راجیندر منچندا بانی

ادھر کی آئے گی اک رو ادھر کی آئے گی

راجیندر منچندا بانی

MORE BY راجیندر منچندا بانی

    ادھر کی آئے گی اک رو ادھر کی آئے گی

    کہ میرے ساتھ تو مٹی سفر کی آئے گی

    ڈھلے گی شام جہاں کچھ نظر نہ آئے گا

    پھر اس کے بعد بہت یاد گھر کی آئے گی

    نہ کوئی جا کے اسے دکھ مرے سنائے گا

    نہ کام دوستی اب شہر بھر کی آئے گی

    ابھی بلند رکھو یارو آخری مشعل

    ادھر تو پہلی کرن کیا سحر کی آئے گی

    کچھ اور موڑ گزرنے کی دیر ہے بانی

    صدا نہ گرد کسی ہم سفر کی آئے گی

    مآخذ:

    • کتاب : Kulliyat-e-bani (Pg. 93)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY