اک برگ سبز شاخ سے کر کے جدا بھی دیکھ

مرتضیٰ برلاس

اک برگ سبز شاخ سے کر کے جدا بھی دیکھ

مرتضیٰ برلاس

MORE BYمرتضیٰ برلاس

    اک برگ سبز شاخ سے کر کے جدا بھی دیکھ

    میں پھر بھی جی رہا ہوں مرا حوصلہ بھی دیکھ

    ذرے کی شکل میں مجھے سمٹا ہوا نہ جان

    صحرا کے روپ میں مجھے پھیلا ہوا بھی دیکھ

    تو نے تو مشت خاک سمجھ کر اڑا دیا

    اب مجھ کو اپنی راہ میں بکھرا ہوا بھی دیکھ

    مانا کہ تیرا مجھ سے کوئی واسطہ نہیں

    ملنے کے بعد مجھ سے ذرا آئنہ بھی دیکھ

    تیرے لیے تو صرف اشاروں کا کھیل تھا

    مجھ کو جو پیش آیا ہے وہ حادثہ بھی دیکھ

    اوروں کے پاس جا کے مری داستاں نہ پوچھ

    جو کچھ ہے میرے چہرے پہ لکھا ہوا بھی دیکھ

    ہموار راستوں پہ مرا ساتھ چھوڑ کر

    آگے نکل گیا تھا تو اب راستہ بھی دیکھ

    چہرے کی چاندنی پہ نہ اتنا بھی مان کر

    وقت سحر تو رنگ کبھی چاند کا بھی دیکھ

    مأخذ :
    • کتاب : Range-e-Gazal (Pg. 334)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY