اک درد سا پہلو میں مچلتا ہے سر شام

حفیظ تائب

اک درد سا پہلو میں مچلتا ہے سر شام

حفیظ تائب

MORE BYحفیظ تائب

    اک درد سا پہلو میں مچلتا ہے سر شام

    جب چاند جھروکے میں نکلتا ہے سر شام

    بے نام سی اک آگ دہک اٹھتی ہے دل میں

    مہتاب جو ٹھنڈک سی اگلتا ہے سر شام

    کچھ دیر شفق پھولتی ہے جیسے افق پر

    ایسے ہی مرا حال سنبھلتا ہے سر شام

    یہ دل ہے مرا یا کسی کٹیا کا دیا ہے

    بجھتا ہے دم صبح تو جلتا ہے سر شام

    بنتا ہے وہ اک چہرہ کبھی گل کبھی شعلہ

    سانچے میں خیالوں کے جو ڈھلتا ہے سر شام

    چھٹ جاتی ہے آلام زمانہ کی سیاہی

    جب دور تری یاد کا چلتا ہے سر شام

    میں دور بہت دور پہنچ جاتا ہوں تائبؔ

    رخ سوچ کا دھارا جو بدلتا ہے سر شام

    مأخذ :
    • کتاب : Beesveen Sadi Ki Behtareen Ishqiya Ghazlen (Pg. 83)
    • کتاب : Beesveen Sadi Ki Behtareen Ishqiya Ghazlen (Pg. 83)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY