اس کا گلہ نہیں کہ دعا بے اثر گئی

تلوک چند محروم

اس کا گلہ نہیں کہ دعا بے اثر گئی

تلوک چند محروم

MORE BYتلوک چند محروم

    اس کا گلہ نہیں کہ دعا بے اثر گئی

    اک آہ کی تھی وہ بھی کہیں جا کے مر گئی

    اے ہم نفس نہ پوچھ جوانی کا ماجرا

    موج نسیم تھی ادھر آئی ادھر گئی

    دام غم حیات میں الجھا گئی امید

    ہم یہ سمجھ رہے تھے کہ احسان کر گئی

    اس زندگی سے ہم کو نہ دنیا ملی نہ دیں

    تقدیر کا مشاہدہ کرتے گزر گئی

    انجام فصل گل پہ نظر تھی وگرنہ کیوں

    گلشن سے آہ بھر کے نسیم سحر گئی

    بس اتنا ہوش تھا مجھے روز وداع دوست

    ویرانہ تھا نظر میں جہاں تک نظر گئی

    ہر موج آب سندھ ہوئی وقفہ پیچ و تاب

    محرومؔ جب وطن میں ہماری خبر گئی

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    اس کا گلہ نہیں کہ دعا بے اثر گئی نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY