عشق کے مراحل میں وہ بھی وقت آتا ہے

عامر عثمانی

عشق کے مراحل میں وہ بھی وقت آتا ہے

عامر عثمانی

MORE BYعامر عثمانی

    عشق کے مراحل میں وہ بھی وقت آتا ہے

    آفتیں برستی ہیں دل سکون پاتا ہے

    آزمائشیں اے دل سخت ہی سہی لیکن

    یہ نصیب کیا کم ہے کوئی آزماتا ہے

    عمر جتنی بڑھتی ہے اور گھٹتی جاتی ہے

    سانس جو بھی آتا ہے لاش بن کے جاتا ہے

    آبلوں کا شکوہ کیا ٹھوکروں کا غم کیسا

    آدمی محبت میں سب کو بھول جاتا ہے

    کارزار ہستی میں عز و جاہ کی دولت

    بھیک بھی نہیں ملتی آدمی کماتا ہے

    اپنی قبر میں تنہا آج تک گیا ہے کون

    دفتر عمل عامرؔ ساتھ ساتھ جاتا ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY