عشق میں یہ مجبوری تو ہو جاتی ہے

آفتاب اقبال شمیم

عشق میں یہ مجبوری تو ہو جاتی ہے

آفتاب اقبال شمیم

MORE BYآفتاب اقبال شمیم

    عشق میں یہ مجبوری تو ہو جاتی ہے

    دنیا غیر ضروری تو ہو جاتی ہے

    ایک انائے بے چہرہ کے بدلے میں

    چلیے کچھ مشہوری تو ہو جاتی ہے

    دل اور دنیا دونوں کو خوش رکھنے میں

    اپنے آپ سے دوری تو ہو جاتی ہے

    لفظوں میں خالی جگہیں بھر لینے سے

    بات ادھوری، پوری تو ہو جاتی ہے

    جذبہ ہے جو روز کے زندہ رہنے کا

    ہم سے وہ مزدوری تو ہو جاتی ہے

    مأخذ :
    • کتاب : Beesveen Sadi Ki Behtareen Ishqiya Ghazlen (Pg. 17)
    • Author : Aasima Mushtaq
    • مطبع : Fareed Book Depot Pvt. Ltd (Fareed Book Depot Pvt. Ltd)
    • اشاعت : 2003

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY