اظہار جنوں بر سر بازار ہوا ہے

تنویر انجم

اظہار جنوں بر سر بازار ہوا ہے

تنویر انجم

MORE BY تنویر انجم

    اظہار جنوں بر سر بازار ہوا ہے

    دل دست تمنا کا گرفتار ہوا ہے

    بے ہوش گنہ جو دل بیمار ہوا ہے

    اک شوق طلب سا مجھے تلوار ہوا ہے

    صحرائے تمنا میں مرا دل تجھے پا کر

    شہر ہوس آلود سے بیزار ہوا ہے

    بے ہوش خرد کو جنوں آگاہ کرے گا

    یہ جذب جو آمادۂ پیکار ہوا ہے

    میں وصل کی شب رقص غم آمیز کروں گی

    اک درد مرا ہم شب بے دار ہوا ہے

    اس درجہ نشہ کب ہے کہ گمراہ رہوں میں

    یہ ہوش مرا دشمن دشوار ہوا ہے

    ٹوٹی ہے یہ کشتی تو مرے ساتھ سفر کو

    وہ جان مسافت مرا تیار ہوا ہے

    اس خوبیٔ قسمت پہ مجھے ناز بہت ہے

    وہ شخص مری جاں کا طلب گار ہوا ہے

    میں آئینۂ دل کو سر خواب ہی توڑوں

    اس دشت شناسا کا یہ اصرار ہوا ہے

    کچھ کام کب آیا ہے مرا گریۂ شب بھی

    اسراف دل و جاں مرا بے کار ہوا ہے

    مآخذ:

    • Book : siip-volume-47 (Pg. 52)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY