جان ایام‌ دلبری ہے یاد

فائز دہلوی

جان ایام‌ دلبری ہے یاد

فائز دہلوی

MORE BYفائز دہلوی

    جان ایام‌ دلبری ہے یاد

    سیر‌ گل زار و مے خوری ہے یاد

    دیکھتا نہیں سورج کوں نظراں بھر

    جس کوں تجھ جامۂ‌ زری ہے یاد

    خوب پھولی تھی باغ میں نرگس

    گل صد برگ و جعفری ہے یاد

    وہ چراغاں و چاندنی کی رات

    سیر ہت پھول‌ و پھلجھڑی ہے یاد

    وہ تماشا و کھیل ہولی کا

    سب کے تن رخت کیسری ہے یاد

    ہو دوانا جنگل میں کیوں نہ پھرے

    جس کو وہ سایۂ پری ہے یاد

    اے سیہ مست میری انکھیوں کی

    لال بادل کی تجھ جھری ہے یاد

    جب تمن پاس فائزؔ آیا تھا

    بات کہنا بی سرسری ہے یاد

    مآخذ:

    Dewan-e-Faiz
    • Dewan-e-Faiz

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY