جب سفر سے لوٹ کر آنے کی تیاری ہوئی

آفتاب حسین

جب سفر سے لوٹ کر آنے کی تیاری ہوئی

آفتاب حسین

MORE BYآفتاب حسین

    جب سفر سے لوٹ کر آنے کی تیاری ہوئی

    بے تعلق تھی جو شے وہ بھی بہت پیاری ہوئی

    چار سانسیں تھیں مگر سینے کو بوجھل کر گئیں

    دو قدم کی یہ مسافت کس قدر بھاری ہوئی

    ایک منظر ہے کہ آنکھوں سے سرکتا ہی نہیں

    ایک ساعت ہے کہ ساری عمر پر طاری ہوئی

    اس طرح چالیں بدلتا ہوں بساط دہر پر

    جیت لوں گا جس طرح یہ زندگی ہاری ہوئی

    کن طلسمی راستوں میں عمر کاٹی آفتابؔ

    جس قدر آساں لگا اتنی ہی دشواری ہوئی

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    جب سفر سے لوٹ کر آنے کی تیاری ہوئی نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY