کر کے اسیر غمزہ و ناز و ادا مجھے

برقی اعظمی

کر کے اسیر غمزہ و ناز و ادا مجھے

برقی اعظمی

MORE BYبرقی اعظمی

    کر کے اسیر غمزہ و ناز و ادا مجھے

    اے دل نواز تو نے یہ کیا دے دیا مجھے

    جانا تھا اتنی جلد تو آیا تھا کس لئے

    ایک ایک پل ہے ہجر کا صبر آزما مجھے

    بجھنے لگی ہے شمع شبستان آرزو

    اب سوجھتا نہیں ہے کوئی راستا مجھے

    آنکھیں تھیں فرش راہ تمہارے لئے سدا

    تم آس پاس ہو یہیں ایسا لگا مجھے

    یہ درد دل ہے میرے لئے اب وبال جاں

    ملتا نہیں کہیں کوئی درد آشنا مجھے

    کشتئ دل کا سونپ دیا جس کو نظم و نسق

    دیتا رہا فریب وہی ناخدا مجھے

    رہزن سے بڑھ کے اس کا رویہ تھا میرے ساتھ

    پہلی نگاہ میں جو لگا رہنما مجھے

    اب میں ہوں اور خواب پریشاں ہے میرے ساتھ

    کتنا پڑے گا اور ابھی جاگنا مجھے

    کیا یہ جنون شوق گناہ عظیم ہے

    کس جرم کی ملی ہے یہ آخر سزا مجھے

    برقیؔ نہ ہو اداس سر رہ گزر ہے وہ

    پیغام دے گئی ہے یہ باد صبا مجھے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY