خیال لمس کا کار ثواب جیسا تھا

ابرار اعظمی

خیال لمس کا کار ثواب جیسا تھا

ابرار اعظمی

MORE BY ابرار اعظمی

    خیال لمس کا کار ثواب جیسا تھا

    اثر صدا کا بھی موج شراب جیسا تھا

    ورق نچے ہوئے سب لفظ و معنی گم سم تھے

    یہ بات سچ ہے وہ چہرہ کتاب جیسا تھا

    تمام رات وہ پہلو کو گرم کرتا رہا

    کسی کی یاد کا نشہ شراب جیسا تھا

    اداس ذروں کے ہمراہ کوئی پھرتا رہا

    خموشیوں کا بیاباں سراب جیسا تھا

    اک عمر کھوئی تو یہ راز مجھ پہ فاش ہوا

    خیال مہر و وفا نقش آب جیسا تھا

    مآخذ:

    • کتاب : shab-khoon(web site) (Pg. 68)
    • اشاعت : 39

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY