کسی جھوٹی وفا سے دل کو بہلانا نہیں آتا

عدیم ہاشمی

کسی جھوٹی وفا سے دل کو بہلانا نہیں آتا

عدیم ہاشمی

MORE BYعدیم ہاشمی

    کسی جھوٹی وفا سے دل کو بہلانا نہیں آتا

    مجھے گھر کاغذی پھولوں سے مہکانا نہیں آتا

    میں جو کچھ ہوں وہی کچھ ہوں جو ظاہر ہے وہ باطن ہے

    مجھے جھوٹے در و دیوار چمکانا نہیں آتا

    میں دریا ہوں مگر بہتا ہوں میں کہسار کی جانب

    مجھے دنیا کی پستی میں اتر جانا نہیں آتا

    زر و مال و جواہر لے بھی اور ٹھکرا بھی سکتا ہوں

    کوئی دل پیش کرتا ہو تو ٹھکرانا نہیں آتا

    پرندہ جانب دانہ ہمیشہ اڑ کے آتا ہے

    پرندے کی طرف اڑ کر کبھی دانہ نہیں آتا

    اگر صحرا میں ہیں تو آپ خود آئے ہیں صحرا میں

    کسی کے گھر تو چل کر کوئی ویرانہ نہیں آتا

    ہوا ہے جو سدا اس کو نصیبوں کا لکھا سمجھا

    عدیمؔ اپنے کئے پر مجھ کو پچھتانا نہیں آتا

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق,

    نعمان شوق

    کسی جھوٹی وفا سے دل کو بہلانا نہیں آتا نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے