کتنے سوال سب کی نگاہوں میں رکھ دیئے

عقیل دانش

کتنے سوال سب کی نگاہوں میں رکھ دیئے

عقیل دانش

MORE BY عقیل دانش

    کتنے سوال سب کی نگاہوں میں رکھ دیئے

    گھر کے سبھی چراغ ہواؤں میں رکھ دیئے

    یہ انقلاب گردش دوراں تو دیکھیے

    اجسام کیسے کیسی قباؤں میں رکھ دیئے

    محفل میں شعر ہی نہیں کچھ روشنی بہ دوش

    انوار ہم نے دل کی فضاؤں میں رکھ دیئے

    ہر شخص چاہتا ہے کہ ہوں اس پہ آشکار

    اسرار تو نے کیسے گناہوں میں رکھ دیئے

    فطرت کا یہ ستم بھی ہے دانشؔ عجیب چیز

    سر کیسے کیسے کیسی کلاہوں میں رکھ دیئے

    مآخذ:

    • کتاب : Shora-e-London (Pg. 86)
    • Author : Jauhar Zahiri
    • مطبع : Books From India (U.K) Ltd. 45, Museum Street,Londan W.C-1 (1985)
    • اشاعت : 1985

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY