کوئی دل لگی دل لگانا نہیں ہے

دتا تریہ کیفی

کوئی دل لگی دل لگانا نہیں ہے

دتا تریہ کیفی

MORE BY دتا تریہ کیفی

    کوئی دل لگی دل لگانا نہیں ہے

    قیامت ہے یہ دل کا آنا نہیں ہے

    منائیں انہیں وصل میں کس طرح ہم

    یہ روٹھے کا کوئی منانا نہیں ہے

    ہے منظور انہیں امتحاں شوق دل کا

    نزاکت کا خالی بہانہ نہیں ہے

    وفا پر دغا صلح میں دشمنی ہے

    بھلائی کا ہرگز زمانہ نہیں ہے

    شب غم بھی ہو جائے گی اک دن آخر

    کبھی اک روش پر زمانا نہیں ہے

    ہے کوئے بتاں بس گھر اس کا ہی کیفیؔ

    زمانے میں جس کو ٹھکانا نہیں ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY