کوئی شیشہ نہ در سلامت ہے

خواجہ ساجد

کوئی شیشہ نہ در سلامت ہے

خواجہ ساجد

MORE BYخواجہ ساجد

    کوئی شیشہ نہ در سلامت ہے

    گھر مرا دشت کی امانت ہے

    سارے جذبوں کے باندھ ٹوٹ گئے

    اس نے بس یہ کہا اجازت ہے

    جان کر فاصلے سے ملنا بھی

    آشنائی کی اک علامت ہے

    اس سے ہر رسم و راہ توڑ تو دی

    دل کو لیکن بہت ندامت ہے

    روبرو اس کے ایک شب جو ہوئے

    ہم نے جانا کہ کیا عنایت ہے

    دو قدم ساتھ چل کے جان لیا

    کیا سفر اور کیا مسافت ہے

    کل سیاست میں بھی محبت تھی

    اب محبت میں بھی سیاست ہے

    رات پلکوں پہ دل دھڑکتا تھا

    تیرا وعدہ بھی کیا قیامت ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY