کیا کہیں ملتا ہے کیا خوابوں میں

عبدالعزیز فطرت

کیا کہیں ملتا ہے کیا خوابوں میں

عبدالعزیز فطرت

MORE BYعبدالعزیز فطرت

    کیا کہیں ملتا ہے کیا خوابوں میں

    دل گھرا رہتا ہے مہتابوں میں

    ہر تمنائے سکون ساحل

    الجھی الجھی رہی سیلابوں میں

    دل انساں کی سیاہی توبہ

    ظلمتیں بس گئیں مہتابوں میں

    آپ کے فیض سے تنویریں ہیں

    کعبۂ عشق کی محرابوں میں

    اپنا ہر خواب تھا اک موج سرور

    یوں ہوئی عمر بسر خوابوں میں

    حسن قسمت سے ہمیشہ فطرتؔ

    بخت بیدار رہا خوابوں میں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY