لہو کی لہر میں اک خواب دل شکن بھی گیا

فہیم شناس کاظمی

لہو کی لہر میں اک خواب دل شکن بھی گیا

فہیم شناس کاظمی

MORE BYفہیم شناس کاظمی

    لہو کی لہر میں اک خواب دل شکن بھی گیا

    پھر اس کے ساتھ ہی آنکھیں گئیں بدن بھی گیا

    بدلتے وقت نے بدلے مزاج بھی کیسے

    تری ادا بھی گئی میرا بانکپن بھی گیا

    بس ایک بار وہ آیا تھا سیر کرنے کو

    پھر اس کے ساتھ ہی خوشبو گئی چمن بھی گیا

    بس اک تعلق بے نام ٹوٹنے کے بعد

    سخن تمام ہوا رشتۂ سخن بھی گیا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY